سپرموجن سپرم گرو کورس

اینکر:۔اسلام و علیکم۔۔ ناظرین ۔۔۔ امید ہے آپ سب خیریت سے ہوں گے۔ ناظرین آج ہم نے اپنے پروگرام میں جس شخصیت کو دعوت دی ہے وہ ملک پاکستان کے نامور اور بے اولادی کے مشہور روحانی معالج جو کسی تعارف کے محتاج نہیں جناب حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر آج ہم ڈاکٹر صاحب سے جس کورس کے بارے میں پوچھے گے اس کانام ہے سپرموجن سپرم گرو combinedکورس جو مردوں میں بانجھ پن کے مرض کو ختم کرتا ہے(جوoligospermia,azoospermia,necrospermiaمیں نہایت مفید ہے) اور ان کے اندر سپرم کی مقدار کو بڑھا کر اس میں طاقت لاتا ہے آج آپ کو ڈاکٹر صاحب بتائیں گے کہ مردانہ بانجھ کیا ہوتا ہے؟اس کی وجوہات ، اسباب، علامات ، علاج اس کے علاوہ اور بہت سی باتیں جن سے مردانہ بانجھ پن سے بچا جا سکتا ہے جیسا کہ بہت سے لوگ جانتے ہیں کہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر اپنے بہترین ہربل طریقہ علاج کی وجہ سے پوری دنیا میں شہرت یافتہ ہیں تو آئیے ڈاکٹر صاحب

سے ملتے ہیں ۔

اینکر:۔ڈاکٹر صاحب اسلام و علیکم۔۔۔
ڈاکٹر:۔وعلیکم اسلام
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب سب سے پہلے تو آج آپ ہمارے ناظرین کو اس مرض کے بارے میں بتائیں کے بانجھ پن کسے کہتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔میاں بیوی کے درمیان ایک سال تک عمومی و ظیفہ زوجیت اور تعلق قائم رہنے کے باوجود اولاد نہ ہو یا حمل نہ ٹھہر پائے اسے ہم بانجھ پن سے تعبیر کرتے ہیں۔آپ کی چھوٹی سی کمزوری زند گی کی بڑی محرومی بن سکتی ہے۔آدم کی جنس مرد کو نر اور مادہ کو عورت کہا جاتا ہے۔ دیگر مقاصد تخلیق کے علاوہ ان کا ایک نہایت بنیادی و صف بقائے نسل انسانی اور تسلسل آدمیت ہے اور جب ان میں کوئی خرابی پیدا ہو کر نسل پیدا کرنے کی قابلیت مفقود ہو جائے تو طبعی اصطلاح میں اسے بانجھ پن کہا جاتا ہے۔ بد قسمتی سے ہمارے معاشرے میںیہ غلط تصور پایا جاتا ہے کہ بانجھ پن کا مرض صرف عورتوں میں پایا جاتا ہے۔ مگر حقیقت میں ایسا نہیں ہے۔ بانجھ پن مردوں اور عورتوں دونوں میں پایا جاتا ہے۔ مردوں کی طرف سے منسوب ہو کر عوامی زبان بانجھ پن کو نامردی یا مردانہ بانجھ پن کہا جاتا ہے۔ شادی شدہ جوڑوں میں شادی کے پہلے سال حصول حمل کا امکان80فیصد ہوتا ہے۔جبکہ شادی کے دوسرے سال اسی ابتدائی سو فیصد میں سے حمل کی کامیابی کا امکان 10فیصد تک رہ جاتا ہے۔ جبکہ شادی کے دو سال بعد باقی10فیصد جوڑوں کے لئے کسی نہ

کسی طرح کا طبی تعاون درکار ہوتا ہے۔
مردوں میں بانجھ پن کے لحاظ سے سمین(مادہ تولید) کی تین اقسام ہیں۔
1۔مادہ تولید میں سپرم کی کمی oligospermia
2۔مادہ تولیدمیں سپرم کی غیر موجودگی ؂ azoospermia
3۔مادہ تولید میں سپرم کا مردہ ہونا necrospermia
مادہ تولید میں سپرم کی کمی oligospermia:۔مردانہ بانجھ پن کی ایک وجہ مادہ تولید میں سپرم کی تعداد کا کم ہونا ہے۔ سپرم کی مناسب مقدار200ملین سے600ملین ہے۔ اگر سپرم کی مناسب تعداد120ملین سے کم ہو تو سپرم کی کمی کہا جائے گا۔ اس کی کمی کی کئی حیاتیاتی و ماحولیاتی وجوہات ہو سکتی ہیں مثلاً کثرت مباشرت ، مادہ تولیدکا کم پیدا ہونا، ان ٹیوبز میں نقص ہونا جو سپرم کو خصیوں سے عضوتناسل کی طرف لے جاتی ہیں ، خصیوں میں اینٹھن وغیرہ اس کے علاوہ ذہنی و جسمانی بے چینی، بے خوابی اور ہارمونز کے توازن میں بگاڑ ہونے سے بھی سپرم کی پیدائش کم ہوتی ہے ۔تنگ کپڑوں کا استعمال بھی ہارمون کی پیدائش کو کم کرنے میں مدد دیتا ہے۔ روزمرہ کی عادات مثلاً سگریٹ نوشی، گرم پانی کے ٹب میں دیر تک نہاتے رہنا۔ الکوحل کا زیادہ استعمال، لیپ ٹاپ کا زیادہ دیر گود میںرکھ کر استعمال وغیرہ شامل ہیں۔
2۔مادہ تولیدمیں سپرم کی غیر موجودگی azoospermia:۔مادہ تولید میں سپرم کی بالکل غیر موجودگیazoospermiaکہلاتا ہے۔ اس بیماری میں مادہ تولید میں سپرم بالکل پیدا ہی نہیں ہوتے ۔مادہ تولید میں سپرم بالکل پیدا نہ ہونے کا سب سے بڑا سبب انفیکشن ہے۔ جس میں پیپ آنا، خون کے سرخ ذرات کا آنا یا پھر بیکٹیریاوغیرہ کی موجودگی ہے۔azoospermiaکی دو اقسام ہیں۔
1۔obstrustctive azoospermia:۔اگر خصیے سائز میں نارمل ہوں اور ہارمون لیول بھی نارمل ہو تو خصیے اور عضوتناسل کے درمیان نالیاں بند ہونے کوobstrustctive azoospermiaکہتے ہیں۔ یہ مرض خصیوں سے مادہ تولید باہر نکالنے والی نالیوں پر چوٹ لگنے یا ان میں نقص پیدا ہونے کی وجہ سے ہوتا ہے اس کے علاوہ ہرنیوں کا آپریشن بھی اس کی خاص وجہ ہے۔
2۔nonobostrictive azoospermia:۔اس بیماری میں مادہ تولید میں سپرم کا پیدا نہ ہونا خصیوں کی وجہ سے خصیوں میں نقص ہونا، اس کے علاوہ خصیوں میں پیدائشی نقص ہونا، ہارمون لیول نارمل نہ ہونا، خصیوں کا انفیکشن اور تیز بخار بھی اس کی وجہ بنتا ہے۔
necrospermia(مادہ تولیدمیں سپرم کا مردہ ہونا):۔ necrospermiaبانجھ پن کی ایک ایسی قسم ہے جس میں مادہ تولید میں سپرم موجود تو ہوتے ہیں لیکن وہ زندہ نہیں ہوتے اور مردہ ہونے کے باعث وہ اس قابل نہیں رہتے کہ حمل قرار پانے کا باعث بن سکیں۔اگر منی میں40فیصد سپرم مردہ حالت میں ہوں تو یہ بیماریnecrospermiaکہلائے گی۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب کیا خود لذتی ایک نقصان دہ عمل ہے اور اس سے بانجھ پن کا مرض لاحق ہو سکتا ہے ؟
ڈاکٹر:۔ جی بالکل خودلذتی کی وجہ سے بانجھ پن کا مرض لاحق ہو سکتا ہے ۔خود لذتی ایک عام رویہ ہے مگر25سال کی عمر سے قبل اس کا بہت نقصان ہے عضو پتلا ہو جاتا ہے اور لمبائی رُک جاتی ہے اور شادی کے بعد بانجھ پن کی شکل میں اس کا نقصان سامنے آتا ہے ۔ لیکن اس عمل کو تقریباً ہر مرد اور عورت اپنی زندگی میں کبھی نہ کبھی اختیار کرتے ہیں ۔خود لذتی کے عمل سے طبی لحاظ سے کافی ذیلی اثرات واقع ہوتے ہیں ۔تاہم یہ اُس صورت میں مسئلہ بن سکتا ہے جب اس کی وجہ سے اپنی بیوی کے ساتھ کی جانے والی جنسی سرگرمیاں کم کر دیں ، شادی شدہ حضرات خودلذتی کی وجہ سے سرعت انزال کا شکا ر ہو جاتے ہیں یہ عمل روزمرہ کی زندگی اور سرگرمیوں میں خلل کا سبب بننے لگتا ہے ۔یہ گھریلو نا چاقی کا سب سے بڑا سبب بنتا ہے۔جب کوئی فرد کثرت کے ساتھ خود لذتی کا عمل کرتا ہے تو اُس کے وہ خلیات مسلسل تحریک پاتے ہیں جو دماغ میں ایسے کیمیائی اجزاء اور ہارمونز کو پیدا کرتے ہیں جو جنسی ردعمل کے دورانئے کے مختلف مراحل کے لئے ذمہ دار ہوتے ہیں ۔اس طرح ان خلیات کا نہ صرف اپنا عمل تیز ہو جاتا ہے بلکہ اس کی تعداد میں بھی اضافہ ہو جاتا ہے لہٰذا جب ایسا فرد خود لذتی کا عمل کرتا ہے تو اُس کے جسم میں ایسے کیمیائی اجزاء معمول سے زیادہ بنتے ہیں اور ان کے اثرات بھی معمول سے زیادہ ہوتے ہیں۔جو لوگ خود لذتی کر تے ہیں اس کی وجہ سے وہ بانجھ پن کا شکار بھی ہو جاتے

ہیں ۔
اینکر:َڈاکٹر صاحب مادہ منویہ کی قلت ورقت(پتلاپن)بھی مردانہ بانجھ پن کی وجہ بنتی ہے اس کے بارے میں ذرا ہمارے ناظرین کو بتا دیں؟
ڈاکٹر:۔جی بالکل مادہ تولید کا پتلا پن بھی مردانہ بانجھ پن کی وجہ بنتی ہے کیونکہ مادے میں اتنی طاقت نہیں رہتی جس کی وجہ سے وہ حمل ٹھہرا سکے۔بد ن سے جنسی ملاپ وغیرہ کے ذریعے مادہ منویہ خارج ہوتا ہے۔ مردانہ طاقت اور بدن کی قوت وغیرہ کے لئے ضروری ہے کہ اسی مقدار میں مادہ منویہ دوبارہ پیدا ہو۔ اس کے لئے ضروری ہے کہ متناسب غذا کا استعمال کیا جائے تا کہ بدن مادہ منویہ کا بدل حاصل کر سکے۔ جنسی ملاپ کی کثرت ، جلق،کثرت احتلام کی وجہ سے بدن میں مادہ منویہ کی کمی ہو جاتی ہے ،مریض سستی کا شکار ہو جاتا ہے۔ پوری طاقت محسوس نہیں ہوتی۔ انزال کے وقت مادہ منویہ کم مقدار میں خارج ہوتا ہے۔ بعض صورتوں میں انزال کے وقت مادہ منویہ کے بجائے خون خارج ہوتا ہے۔ مادہ منویہ کی رقت(پتلاپن)کئی جنسی امراض کا پیش خیمہ ثابت ہوتی ہے۔ یہ رقت کثرت جماع، جریان احتلام، جگر و مثانہ کی گرمی کے باعث ہے۔ رقت (پتلا پن)کو دور کرنا بہت ضروری ہے تا کہ جنسی اور جسمانی کمزوری جلد دور ہو جائے اور صحت دستیاب کرنے کے لئے مادہ منویہ میں متوازن رہے،نشہ آور اشیاء کے استعمال سے بھی یہشکایت پیدا ہو جاتی ہے اسی عارضے میں آلات منی بھی متاثر ہوتے ہیں جن سے مادہ منویہ کی پیدائش کم ہو جاتی ہے۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب مردانہ بانجھ کے اسباب تو ہمارے ناظرین کو بتا دیں؟
ڈاکٹر: مردانہ بانجھ پن جنسی قوت کی خرابی کا نام ہے اور جنسی قوت تین قوتوں کا مجموعہ ہے ان تین قوتوں میں سے جب کسی قوت یا فعل میں خرابی ہو گی تو بانجھ پن پیدا ہو سکتا ہے ہر وقت کی غیر طبی حالت میں بانجھ پن کی نوعیت بھی مختلف ہوتیں ہیں۔1۔خواہش ، جذبے کا نہ ہونا۔ خواہش ، جذبے اور کشش کا تعلق اعصاب سے ہے۔ اس جذبے میں کمی بیشی کے لئے اعصاب کو دیکھا جائے گا۔2۔نطفے کی منتقلی کے لئے عضو مخصوص کی کارکردگی کو پیش نظر رکھا جائے گا۔ کیونکہ نطفہ اور خواہش دونوں موجود ہوں لیکن متعلقہ مقام تک پہنچانے کے لئے عضو میں ہی جان نہ ہو تو ایسے بانجھ پن کی نوعیت اول سے مختلف ہو گی۔3۔نطفہ خصیوںtesticlesکے تحت تیار ہوتا ہے۔ اس میں نقص واقع ہو تو غدی بانجھ پن تصور ہو گا۔ یہ تینوں مفرداعضاء اپنی حالت سے ایک دوسرے کو متاثر(طاقتور، کمزور اور سست)کرتے ہیں۔ جب ان کے افعال میں توازن ہو گا تو جنسی قوت بھی درست ہو گی۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب دوران علاج مریض کو کن کن چیزوں سے پرہیز کرنا چاہیے اور کون کون سی چیزوں کا استعمال کرنا مریض کے لئے مفید ہے؟
ڈاکٹر:۔۔ پرہیز علاج سے بہتر ہے۔
پرہیز:۔آلو مٹر، گوبھی ، بیگن ، پالک ، چاول، بڑا گوشت، پکوڑے سموسے، اچار چٹنی تمام گرم بادی جٹ پٹی تیز مصالحے جات تمام کولڈ ڈرنکس ، ٹھنڈی اشیاء ، شیور مرغی سے مکمل طور پر پرہیز کرنا چاہیے۔
استعمال کرنے والی اشیاء:۔کدو، ٹنڈے ، توری، مولی ، گاجر، شکجم، چھوٹا گوشت، دودھ دہی، تمام ڈرائی فروٹ ، شہد ، کھجور،کالے سفید چنے، دال ماش مچھلی دہی لیموں فرائش فروٹ سیب، کینو، مالٹا، آم اور کیلا وغیرہ استعمال کر سکتے ہیں۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب جو مرد حضرات ان مرض میں مبتلا ہے آپ کے پاس اس مرض کا کوئی علاج موجود ہے جس کو استعمال کر کےمایوس لوگ اس بیماری سے بآسانی سے نجات حاصل کر سکے؟
ڈاکٹر:۔ہمارے ادارے تاثیر دواخانہ کے مایہ ناز ڈاکٹرز، حکماء اور سائنسدانوں نے میری سر پرستی میں برس ہا برس کی تحقیقات اور بانجھ پن کے اصل اسباب اور وجو ہات کو مد نظر رکھ کر اپنی ریسرچ سے سپرموجن سپرم گروcombinedکورس کو متعارف کراویاہے جو ہر طرح کے کیمیائی اجزاء سے پاک مکمل طور پر قدرتی دوا ہے اس کا کوئی بھی سائیڈ ایفیکٹ نہیں ہے یہ خالص جڑی بوٹیوں سے تیار شدہ ہے اور100فیصد نتائج کی حامل ہے ۔ تاثیر لیبارٹریز نے برسوں کی تحقیق کے بعد سپرم کی افرائش کے لئے ایسا کورس تیار کیا ہے جس کا نام سپرموجن سپرم گروcombined کورس ہے ۔ یہ کورس شعبہ ریسرچ نے دیسی جڑی بوٹیوں کی آمیزش کے ساتھ طب اسلامی کے اصولوں کے عین مطابق سائنٹیفک طریقوں پر تاثیر لیبارٹریز میں جدید آٹو میٹک مشینری کی مدد سے تیار کی ہے۔ جس کے استعمال سے ہر طرح کا انفکیشن ختم ہو جاتا ہے اور منی میں جراثیم نسل پیدا ہونے لگتے ہیں ۔ جس سے,oligospermia, necrospermia azoospermiaجیسی بیماری سے مکمل طور پر نجات مل جاتی ہے۔ یہ مردوں کے جرثومہ حیات میں ہونے والی تبدیلیوں کے افرائشی ہارمون HGHکے سپرم کی سطح میں اضافہ کرتا ہے۔ بے اولاد افراد کے سپرم کم ہوں تو ان کے مادہ تولید میں سپرمز کو نارمل حالت میں لاتا ہے ۔مادہ تولید کی افزائش کو بڑھا کر سپرم کو اولاد کے قابل بناتا ہے۔ سپرم کی پیدائشی کمزوری اور کمی ایسی محرومی ہے جو ایک صحت مند ،طاقتور مرد کو بھی کھوکھلا کر کے باگل پن کی حد تک پہنچا دیتی ہے ان دونوں صورتوں میں یعنی کرم منی کی کمزوری اور اس کے قدرتی تناسب کو درست کر کے اس کے قوام کو ٹھیک کرتا ہے اس میں شامل نہایت ہی قیمتی اور نایاب جڑی بوٹیاں نہ صرف مادہ تولید کو پیدا کرنے اور اسے گاڑھا کرنے میں موثر ہے بلکہ اس میں موجود سپرم کی کمی کو بھی دور کرتا ہے یہ کورس مادہ تولیداور سپرم سمیت تما م مردانہ امراض جو بانجھ پن کا سبب بنتے ہیں جیسے مادہ تولید میں جراثیم یعنی سپرم کا نہ ہونا، خصیوں کا نا کارہ ہونا، خصیوں اور عضوتناسل کے درمیان نالیوں کا بند ہونا، خصیوں میں انفیکشن ہونا وغیرہ کو نہ صرف ختم کرتا ہے بلکہ ان کو دوبارہ پیدا بھی نہیں ہونے دیتا۔سپرموجن سپرم گروcombinedتھیراپی 40یوم کے دورانیہ پر مشتمل ہے سپرموجن سپرم گرو combinedتھیراپی کی مکمل قیمت پاکستانی 12800/-روپے ہے کیونکہ اس سپرموجن سپرم گروcombinedتھیراپی کا شمار ہمارے پست در پست صدی نسخہ جات میں ہوتا ہے اس لئے یہ کورس صرف ہمارے ادارے تاثیر دواخانے پر ہی د ستیا ب ہے مرد حضرات کو میں بتاتا چلو کہ وہ پاکستان میں ہے یا دنیا کے کسی بھی ملک میں ہے آپ بذریعہ آڈر سپرموجن سپرم گروcombinedتھیراپی مانگووا سکتے ہیں۔پاکستان میں ہم بذریعہ V.Pپررسل بھیجتے ہیں اس کے علاوہ آپ خود ہمارے کلینک پر تشریف لا کر خود طلب کر سکتے ہیں۔پاکستان سے باہر دنیا کہ ہر ملک میں ہم بذریعہ ائیر شیب بھیجتے ہیں جہاں ایک خاص بات میں بتاتا چلو ہم پوری دنیا میں ہوم ڈیلوری سروس فراہم کرتے ہیں مطلوبہ کورس آپ کے گھر تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ نوٹ( کورس کے بہترین نتائج کے لئے 4سے6ماہ مسلسل استعمال کریں)
ناظرین اگر آپ بھی سپرموجن سپرم گرو combinedکورس خریدنا چاہتے ہیں تو دیر مت کیجئے بلکہ ابھی کال کر کے اپنا آرڈر بک کروائیں۔ ہمارے ہیلپ لائن نمبرز یہ
ڈاکٹر صاحب سے براہ راست مشورے کے لئے ان نمبر ز پر رابطہ:+92334-9552889
+92321-9552889
+92300-9552889
آپ کی راہنمائی کے لئے میل اور فی میل میڈیکل آفیسرز ہمہ وقت موجود ہیں جن سے آپ اپنی بیماری اور ہر قسم کے مرض کے بارے میں راہنمائی حاصل کر سکتے ہیں جو آپ کو ہر قسم کی راہنمائی فراہم کرئے گے( کلینک ٹائم صبح 9بجے سے لے رات8بجے تک)
میڈیکل آفیسر نمبر1: +92333-5501390
میڈیکل آفیسر نمبر2:۔ +92323-5501390
میڈیکل آفیسرنمبر3: +92336-5777696
میڈیکل آفیسرنمبر4: +92336-5777697
فی میل (لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر1: +92331-5607654
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر2: +92332-5607654
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر3: +92332-5530536
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر4: +92315-5530536
کلینک (Reception landline) نمبرز:۔ +9251-5777696,+9251-5777697,+92515530536,+9251-5773239
نوٹ:۔ آپ اپنی بیماری کے متعلق مکمل معلومات کے ساتھ میل کریں ۔ آپ ہمارے ای میل taseerlabs@gmail.com،taseerdawakhana@gmail.comپر بھی آپ اپنا آرڈر بک کروا سکتے ہیں۔
ہمارا ایڈریس ہے: تاثیر دواخانہ i-111:اقبال روڈ، نزد کمیٹی چوک، چٹیاں ہٹیاں، تاثیر چوک راولپنڈی۔مزید معلومات کے لئے وزٹ کیجئے ہماری ویب سائیٹ www.taseerlabs.com,dawakhanataseer.com۔
اینکر:۔بہت بہت شکریہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر صاحب آپ نے ہمارے ناظرین کو سپرموجن سپرم گروcombinedکورس کے بارے میں بہترین راہنمائی کی امید ہے کہ ناظرین اس سے بہت زیادہ فائدہ اُٹھائیں گے اور آپ کو اپنی دعاؤں میں یاد رکھیں گے۔ ناظرین۔۔۔۔ یہ تھے بے اولادی کے مشہور روحانی معالج حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر جو کہ ہر قسم کے مردانہ و زنانہ امراض کے ماہر ہیں۔ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر نے آج مردانہ بانجھ پن سے متعلق ہم سب کی بہترین راہنمائی کی۔ امید ہے آپ ضرور ڈاکٹر صاحب کی بتائی ہوئی باتوں پر عمل کر کے مردانہ بانجھ پن سے چھٹکارا حاصل کر سکیں گے اور ایسے افراد تک ڈاکٹر صاحب کی بتائی ہوئی باتیں پہنچائیں گے جو کہ اولاد کی نعمت سے محروم ہیں تا کہ وہ جلد از جلد حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر سے اپنا علاج کروا کر اپنے آنگین میں خوشیاں بکھیر سکیں۔۔۔۔ اپنا خیال رکھئے گا۔۔۔ اللہ حافظ

سپرموجن سپرم گر و پلس کورس

اینکر:۔اسلام و علیکم۔۔۔ ناظرین ۔۔امید ہے آپ سب خیریت سے ہوں گے ۔۔ناظرین آ ج ہم نے اپنے پروگرام میں جس شخصیت کو دعوت دی ہے و ہ ملک پاکستان کے نامور اور بے اولادی کے مشہور روحانی معالج جو کسی تعارف کے محتاج نہیں جناب حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر آج ہم ڈاکٹر صاحب سے جس کورس کے بارے میں بات کریں گے وہ ہے سپرموجن سپرم گرو پلس کورس جس کو استعمال کر کے مرد حضرا ت اپنے سپرم کاؤنٹ کو باآسانی بڑھا سکتے ہیں و ہ بھی کسی سائیڈ ایفیکیٹ کے بغیر ۔ناظرین ڈاکٹر صاحب آپ کو بتائیں گے کہ مردانہ بانجھ پن کیا ہوتا ہے؟ اس کی وجوہات ، علامات او ر علاج اس کے علاوہ او ر بہت سے باتیں جس پر عمل کر کے آپ اپنی ازدواجی زندگی کو خوشگوار بنا سکتے ہیں اور اپنے آنگن میں اولاد کی نعمت سے مالا مال ہو سکتے ہیں ۔ جیسا کہ بہت سے لوگ جانتے ہیں کہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر اپنے بہترین ہربل طریقہ علاج کی وجہ سے پوری دنیا میں شہرت یافتہ ہیں تو آئیے ڈاکٹر صاحب سے ملتے ہیں۔


اینکر:۔ڈاکٹر صاحب اسلام و علیکم۔
ڈاکٹر:۔وعلیکم سلام۔۔۔۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب سب سے پہلے ہمارے ناظر ین کو یہ بتائیں کہ بانجھ پن کیا ہو تا ہے او ر اس سے ازدواجی زندگی پر کیا اثر پڑتا ہے؟
ڈاکٹر:۔عورتوں میں اولاد نہ ہونے کے مرض کو عقر (بانجھ پن) کہا جاتا ہے۔ لیکن یہاں اُس مرض کا ذکر کیا جا رہا ہے جو مرد کو اولاد سے محروم رکھنے کا موجب ہے وا ضح ہو کہ مرد کے ایک مرتبہ کے انزال میں جو مادہ تولید خارج ہوتے ہیں اسے (sperm) کہا جاتا ہے۔ اس میں چار سے چھ ارب حونیات منی پائے جاتے ہیں او ر عورتوں میں استقرار حمل کے لئے صرف ایک سپرم کی ضرورت ہوتی ہے بعض اوقات جنسی غلط کاریوں کے بُرے اثرات کی وجہ سے حونیات منویہ کمزور یا کم ہو جاتے ہیں جس کی بنا پر حمل قرا ر نہیں پاتا او ر اولاد پیدا نہیں ہوتی بعض حضرات میں مردانہ طاقت تو موجود ہوتی ہے لیکن سپرم کمزور ہوتے ہیں بعض اوقات مردا نہ طاقت کمزو ر ہوتی ہے مگر سپرم طاقتور او ر مکمل ہوتے ہیں عورت میں بھی یہ نقص پایا جاتا ہے جیسا بچپن کی غلظ کاریوں کے علاوہ خصیوں کی کمزوری، آتشک ، سوزاک، سل و دق ، اور ریڈیم کی شعاعوں کے بُرے اثرات سے بھی یہ مرض ہو جاتا ہے بعض ایلو پیتھک ادویات او ر سٹیرائیڈز کے استعمال سے بھی سپرم ختم ہو جاتے ہیں یا ان کی تعدا د کم ہو جاتی ہے۔منی میں خون، پیپ، بیکٹیر یا کا اخراج بھی اولاد سے محرومی کا باعث بنتا ہے اس مر ض کا علاج مشکل ضرور ہے لیکن ناممکن نہیں ۔ طب یونانی میں ایسی ادویات موجو د ہیں جن سے ما دہ تولید گاڑھا ہو سکتا ہے خون او ر پیپ ختم ہو جاتی ہے سپرم کی مقدا ر بڑھ سکتی ہے اور مادہ منویہ میں اولاد پید ا کرنے والے حیوانیت اور ماد ہ تولید پہلے سے زیادہ طاقتور ہو جاتے ہیں۔


اینکر:۔ڈاکٹر صاحب impotency یعنی نا مردی کسے کہتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔وہ جنسی امراض او ر عوارضات جس کا ذکر میں پہلے کر چکا ہو ں کسی نہ کسی سطح پر نامردی کی تعریف میں آ تے ہیں تاہم اگر قوت مجامعت کمزور ہو جائے عضو مخصوص میں مکمل خیزش انتشار نہ ہو اور مریض وظیفہ جنسی کو پورے طور پر سر انجام نہ دے سکے تو اس حالت کو جنسی کمزوری یا ضعف باہ کہتے ہیں لیکن یہ قوت بالکل ناقص ا ور باطل ہو جائے عضو مخصو ص میں کوئی خیزش نہ ہو تو جماع کی طرف رغبت نہ رہے طبیعت کو جذبہ شہوت سے نفرت ہو جائے اور باوجود کوشش کے جنسی فعل انجام نہ دیا جا سکے تو ا سے عنانت یا نامردی کہتے ہیں۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب نامردی کتنے ا قسام کی ہوتیں ہیں جس میں مرد حضرات ملوث ہوتے ہیں ؟
ڈاکٹر:۔نامردی کو دو اقسام میں منقسم کیا جا سکتا ہے۔


1۔عضوی (organic):۔
functional and
psychological1فعلی ا ور ذہنی:۔ عضوی نا مردی بیرونی طور پر عضو مخصوص کی ساخت ا ور جنسی گلینڈز کی خرابی سے تعلق رکھتی ہے۔ فعلی اور ذہنی نامردی کے مختلف نفسیا تی اور دیگر اسباب ہیں نا مرد ی کی تمام اقسام کی تشخص کرنے کے بعد کو ا لیفائیڈ حکیموں اور ڈاکٹرز سے جنسی تعلیمات حاصل کرنی چاہیے ۔پروفیشنل طوائفوں سے جنسی تعلقات قائم کر نا اگر چہ خلاف وضع فطری فعل نہیں لیکن قانونی او ر شرعی حیثیت سے یہ نا جائز ہے علاوہ ازیں طوائف کا پیار او ر محبت ر وپے پیسے کے لئے ہوتا ہے لہٰذا قدرتی پیار او ر محبت کے فقدان کی وجہ سے وہ کسی بھی فر د کو جنسی طور پر مکمل آسودگی بہم نہیں پہنچا سکتی اس کے علاوہ طوائف کسی ایک فرد کی پابند نہیں ہوتی بلکہ طر ح طرح کے لوگ اس سے جنسی تعلقات قائم کرتے ہیں جن میں چھوتدا ر امراض کے مریض بھی ہو سکتے ہیں لہٰذا بازاری اور پروفیشیل عورتوں سے مختلف امراض مثلاً سوزاک، آتشک ، ایڈز و غیر ہ لاحق ہو سکتی ہیں۔ ماہواری کے دوران عورت کے پاس جانا کئی بیماریوں کو دعوت دیتا ہے ۔چونکہ طوائف کا تو کا روبار ہوتا ہے لہٰذا وہ یہ کبھی بھی نہیں بتاتی کہ وہ ما ہواری سے
ہے لہٰذا دوران ماہواری جنسی تعلقات قائم کرنے و الے افرا د اپنی جوانی کو روگ لگا لیتے ہیں او ر کئی امراض کا شکار ہو جاتے ہیں۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب مادہ تولید کی کتنی بیماریا ں ہوتیں ہیں جس میں مر د حضرات ملوث ہوتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔مادہ تولید کی تین اقسام کی ہوتیں ہیں۔


1۔منی میں سپرم کی کمی oligospermia:۔مردانہ بانجھ پن کی ایک وجہ منی سپرم کی تعدا د کا کم ہونا ہے۔ سپرم کی مناسب مقدار 200 ملین سے 600 ملین ہے۔ اگر سپرم کی مناسب تعداد 120 ملین سے کم ہو تو سپر م کی کمی کہا جائے گا۔ اس کی کمی کی کئی حیاتیاتی، ماحولیاتی وجوہات ہو سکتی ہیں۔ مثلاً کثرت مباشرت، منی کا کم پید ا ہونا، ان ٹیوبز میں نقص ہونا جو سپرم کو خصیوں سے عضوتنا سل کی طرف لے جاتی ہے ، خصیوں میں ا ینٹھن وغیرہ اس کے علاوہ ذہنی و جسمانی ، بے چینی، بے خوابی اور ہارمونز کے توازن میں بگاڑ ہونے سے بھی سپرم کی پیدائش کم ہوتی ہے۔
2۔منی میں سپرم کی غیر موجودگی azoospermia:۔منی میں سپرم کی بالکل غیر موجودگی azoospermia کہلاتا ہے اس بیماری میں منی میں سپرم بالکل پیدا ہی نہیں ہوتے ۔ منی میں سپرم بالکل پیدا نہ ہو نے کا سب سے بڑا سبب انفکیشن ہے۔ جس میں پیپ آنا ، خون کے سرخ ذرات کا آنا یا پھر بیکٹیر یا وغیرہ کی موجودگی ہے ۔azoospermiaکی دو اقسام ہیں۔
i۔obstrustcive azoospermia:۔ا گر خصیے سائز میں نارمل ہوں ا ور ہا رمون لیول بھی نارمل ہو تو خصیے اور عضو تناسل کے درمیان نالیاں بند ہونے کو obstrustcive azoospermiaکہتے ہیں۔
ii۔nonobostrictive azoospermia:۔اس بیماری میں منی میں سپرم کا پیدا نہ ہونا خصیوں کی وجہ سے ہوتا ہے۔ جس کی وجہ سے خصیوں میں نقص ہونا، اس کے علاو ہ خصیوں میں پیدائشی نقص ہونا، ہارمون لیول نارمل نہ ہونا، خصیوں کا انفیکشن او ر تیز بخار بھی اس کی وجہ بنتا ہے۔
3۔necrospermia:۔necrospermia بانجھ پن کی ایسی قسم ہے جس میں منی میں سپرم موجو د تو ہوتے ہیں لیکن وہ زندہ نہیں ہوتے ا ور مردہ ہونے کے باعث وہ اس قابل نہیں رہتے کہ حمل قرار پا نے کا باعث بن سکیں۔ اگر منی میں 40 فیصد سپرم مرد ہ حالت میں ہوں تو یہ بیماری necrospermia کہلائے گی۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب سرعت انزال کے بارے میں ہمارے ناظرین کو بتا دیں کہ یہ کیا ہو تا ہے؟
ڈاکٹر:۔جنسی امراض میں مرد کے لئے سب سے زیاد ہ شرمناک او ر خفت مرض سرعت ا نزال ہے جس کے مکمل علاج کے بغیر رشتہ ازواج کا قائم رہنا دشوار ہو جاتا ہے اپنی بیوی سے شرم اور ندامت کی و جہ سے مریض زندگی پر موت کو ترجیح دینے لگتا ہے۔بوقت جماع (جنسی ملاپ ) فوری طور پر (انزال) منی کا اخراج سرعت انزال کہلاتا ہے جب یہ مرض شدت اختیار کرتا ہے تو دخول سے قبل ہی انزا ل ہو جاتا ہے بعد ازاں حالت یہ ہو جا تی ہے کہ ادھر جنسی ملاپ کا خیال آیا ا دھر ادھوری سی شہوت ہو کر فور اً مادہ تولید خارج ہو گیا او ر
جوش ٹھنڈ ا پڑ جاتا ہے بعض مریضوں کے ایسے حالات تو اس قدر بدتر ہو جاتے ہیں کہ محض شہوانی تصور یا کوئی خوبصورت لڑکی دیکھنے یا عضو مخصوص کے کسی ملا ئم کپڑ ے سے چھو جانے سے خیزش ہو کر یا خیزش ہوئے بغیر معمولی سا دغہ غہ محسوس ہو کر مادہ تولید خارج ہو جاتا ہے۔


اینکر:۔ڈاکٹر صاحب لوگوں کے لئے جنسی راہنمائی کیوں اتنی ضرور ی ہے؟
ڈاکٹر:۔بہت کم نوجوان ایسے ہیں جنہیں اپنی جوانی پر ناز ہو اور و ہ کہہ سکیں کہ ہم نے اپنے ہاتھوں اپنی جوانی کو روگ نہیں لگایا یا پھر دیگر ذ رائع سے جنسی تسکین حاصل کرنے کی کوشش نہیں کی ۔ آج کے نوجوا ن انٹرنیٹ، موبائل ، فحش فلموں و تصاویر ، شہوانی جذبات بھڑ کانے والے ناول اور یورپی طرز معاشرت اپنانے کی وجہ سے sex desire سے مکمل بالغ ہونے سے قبل ہی جنسی فعل کی خواہش کا شکار ہو جاتے ہیں او ر اس خواہش کی تکمیل کے لئے زیادہ تر نوجوا ن ہینڈ پریکٹس mastrubation کی عادت میں مبتلا ہو جاتے ہیں یا sexualty homo اپنا لیتے ہیں بیشتر ہم جنسیت بن جاتے ہیں ۔بھوک پیاس جیسی فطری خواہشو ں کی طر ح جنسی تسکین کی خواہش بھی ایک فطری خواہش ہے جو کہ قدرت کی طرف سے انسا ن کو طبی طور پر عطا کی گئی ہے اس تسکین ، کشش و محبت اور خواہش کا اعلیٰ مقصد اور اہم غرض بقائے نسل انسان ہے لیکن انسان چونکہ فطری طور پر حریص واقع ہو ا ہے اس لئے وہ اس قوت کو غلط کاموں میں استعمال کر کے اپنے آپ کو اس نعمت خد اوندی سے محروم کر لیتا ہے۔ اس لئے جنسی راہنما ئی بہت ضروری ہے ۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب مردانہ بانجھ پن کے اسباب تو ہمارے ناظرین کو بتا دیں؟
ڈاکٹر: مردانہ بانجھ پن جنسی قو ت کی خرابی کا نام ہے ا ور جنسی قوت تین قوتوں کا مجموعہ ہے ان تین قوتوں میں
سے جب کسی قوت یا فعل میں خرا بی ہو گی تو بانجھ پن پیدا ہو سکتا ہے ہر وقت کی غیر طبی حالت میں بانجھ پن کی نوعیت بھی مختلف ہوتیں ہیں ۔
1۔خواہش ، جذبے کا نہ ہونا۔ خواہش ، جذبے او ر کشش کا تعلق اعصاب سے ہے۔ اس جذبے میں کمی بیشی کے لئے
اعصاب کو دیکھا جا ئے گا۔ 2۔نطفے کی منتقلی کے لئے عضو مخصو ص کی کارکردگی کو پیش نظر رکھا جا ئے گا۔ کیونکہ نطفہ اور خواہش دونوں موجود ہوں لیکن متعلقہ مقام تک پہنچا نے کے لئے عضو میں ہی جان نہ ہو تو ایسے بانجھ پن کی نوعیت اول سے مختلف ہو گی۔ 3۔نطفہ خصیوں testicles کے تحت تیار ہو تا ہے۔ اس میں نقص واقع ہو تو غدی با نجھ پن تصور ہو گا۔ یہ تینو ں مفر د اعضاء اپنی حالت سے ایک دوسرے کو متاثر (طاقتور، کمزور اور سست) کرتے ہیں۔ جب ا ن کے افعال میں توازن ہو گا تو جنسی قوت بھی درست ہو گی۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب دوران علاج مریض کو کن کن چیزو ں سے پرہیز کرنا چاہیے او ر کون کون سی چیزوں کا استعمال کرنا مریض کے لئے مفید ہے؟

ڈاکٹر:۔۔ پرہیز علاج سے بہتر ہے۔
پرہیز:۔آلو مٹر ، گوبھی ، بیگن ، پالک ، چاول، بڑا گوشت، پکوڑے سموسے، اچار چٹنی تمام گرم بادی جٹ پٹی تیز مصالحے جات تمام کولڈ ڈرنکس ، ٹھنڈی اشیاء ، شیور مرغی سے مکمل طور پر پرہیز کرنا چاہیے۔
استعمال کرنے والی ا شیاء:۔کدو، ٹنڈے ، توری، مولی ، گاجر، شلجم ، چھوٹا گوشت، دودھ دہی، تمام ڈرائی فروٹ ، شہد ، کھجور، کالے سفید چنے، دال ماش مچھلی دہی لیموں فریش فروٹ سیب، کینو، مالٹا، آم او ر کیلا وغیرہ استعمال کر سکتے ہیں۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب جو مرد اس مرض میں مبتلا ہے اُن مردوں کے لئے آپ کے پاس کوئی تحفہ خاص موجود ہے جس کو استعمال کر کے وہ اس مرض سے بآسانی باہر نکل سکے؟
ڈاکٹر:۔ہمارے ادارے تاثیر دواخانہ کے مایہ ناز ڈاکٹرز، حکماء اور سائنسدانوں نے میری سر پرستی میں برس ہا برس کی تحقیقات اور بانجھ پن کے اصل اسباب اور وجو ہات کو مد نظر رکھ کر اپنی ریسرچ سے سپر موجن سپرم گرو پلس کورس کو متعارف کراویا ہے جو ہر طرح کے کیمیائی اجزاء سے پاک مکمل طو ر پر قدرتی د وا ہے اس کا کوئی بھی سائیڈ ایفیکٹ نہیں ہے یہ خالص جڑی بوٹیوں سے تیار شدہ ہے اور 100 فیصد نتائج کا حامل ہے ۔ تاثیر لیبارٹریز نے برسوں کی تحقیق کے بعد سپرم کی افرائش کے لئے ایسا کورس تیار کیا ہے جس کا نام سپرموجن سپرم گر و پلس کورس ہے ۔یہ کو رس
شعبہ ریسرچ نے دیسی جڑی بوٹیوں کی آمیزش کے ساتھ طب اسلامی کے اصولوں کے عین مطابق سائنٹیفک طریقوں پر تاثیر لیبارٹریز میں جدید آٹو میٹک مشینری کی مدد سے تیا ر کیا ہے۔ جس کے ا ستعمال سے ہر طرح کا انفکیشن ختم ہو جاتا ہے او ر منی میں جراثیم نسل پیدا ہو نے لگتے ہیں ۔ جس سے ,oligospermia, necrospermia azoospermia جیسی بیماری سے مکمل طور پر نجات مل
جاتی ہے۔ یہ مردوں کے جرثومہ حیات میں ہونے والی تبدیلیوں کے افرائشی ہارمون HGH کے سپرم کی سطح میں اضافہ کرتا ہے۔ بے اولاد افراد کے سپرم کم ہوں تو ان کے مادہ تولید میں سپرمز کو نارمل حالت میں لاتا ہے ۔مادہ تولید کی افزائش کو بڑھا کر سپرم کو اولاد کے قابل بناتا ہے۔ سپرم کی پیدائشی کمزوری اور کمی ایسی محرومی ہے جو ایک صحت مند آدمی کو بھی کھو کھلا بنا دیتی ہے ان دونوں صورتوں میں یعنی کرم منی کی کمزوری اور اس کے قدرتی تناسب کو درست کر کے ا س کے قوام کو ٹھیک کرتا ہے اس میں شامل نہایت ہی قیمتی اور نایاب جڑی بوٹیاں نہ صرف مادہ تولید کو پیدا کرنے اور اسے گا ڑھا کرنے میں موثر ہے بلکہ اس میں موجو د سپرم کی کمی کو بھی د ور کر تا ہے یہ کورس
ما دہ تولید اور سپرم سمیت تما م مردانہ امراض جو بانجھ پن کا سبب بنتے ہیں جیسے مادہ تولید میں جراثیم یعنی سپرم کا نہ ہونا، خصیوں کا نا کارہ ہونا، خصیوں اور عضو تناسل کے درمیان نالیوں کا بند ہونا، خصیوں میں انفیکشن ہونا وغیر ہ کو نہ صرف ختم کرتا ہے بلکہ ان کو دوبار ہ پید ا بھی نہیں ہونے دیتا۔ سپرموجن سپرم گرو پلس کورس 40 یوم کے دورانیہ پر
مشتمل ہے سپر موجن سپر م گر و پلس کورس کی مکمل قیمت پاکستانی 16800 روپے ہے کیونکہ اس سپر موجن سپرم گرو پلس کورس کا شمار ہمارے پشت در پشت صد ی نسخہ جات میں ہوتا ہے اس لئے یہ کورس صرف ہمارے ادارے تاثیر دواخانے پر ہی د ستیا ب ہے مرد حضرات کو میں بتاتا چلوں کہ وہ پاکستان میں ہیں یا دنیا کے کسی بھی ملک میں ہیں آپ بذریعہ آڈر سپرموجن سپرم گرو پلس منگوا سکتے ہیں۔ پاکستان میں ہم بذریعہ V.P پارسل بھیجتے ہیں اس کے علاو ہ آپ خود ہمارے کلینک پر تشریف لا کر خو د طلب کر سکتے ہیں۔پاکستان سے با ہر دنیا کہ ہر ملک میں ہم بذریعہ ائیر شیب بھیجتے ہیں جہاں ایک خا ص بات میں بتاتا چلوں ہم پوری دنیا میں ہوم ڈیلوری سروس فراہم کرتے ہیں مطلوبہ کورس آپ کے گھر تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ نوٹ ( کورس کے بہترین نتائج کے لئے 4 سے 6 ما ہ مسلسل استعمال کریں)
ناظرین اگر آپ بھی سپرموجن سپرم گرو پلس کور س خریدنا چاہتے ہیں تو د یر مت کیجئے بلکہ ابھی کال کر کے اپنا آرڈر بک کروائیں۔ ہمارے ہیلپ لائن نمبرز پر رابطہ کریں۔
ڈاکٹر صاحب سے براہ راست مشورے کے لئے ا ن نمبر ز پر رابطہ:+92334-9552889
+92321-9552889
+92300-9552889
آپ کی راہنمائی کے لئے میل او ر فی

میل میڈیکل آ فیسرز ہمہ وقت موجود ہیں جن سے آپ اپنی بیماری او ر ہر قسم کے مرض کے بارے میں راہنمائی حاصل کر سکتے ہیں جو آپ کو ہر قسم کی راہنمائی فراہم کرئے گے ( کلینک ٹائم صبح 9بجے سے لے رات8بجے تک)
میڈیکل آفیسر نمبر1: +92333-5501390

زعفرانی سپرم گرو کورس

اینکر:۔ اسلام و علیکم ۔۔۔ ناظرین ۔۔ امید ہے آ پ سب خیریت سے ہوں گے۔ ناظر ین آ ج ہم نے اپنے پروگرام میں جس شخصیت کو دعوت دی ہے وہ ملک پاکستا ن کے نامور اور بے اولاد ی کے مشہور روحانی معالج جو کسی تعارف کے محتاج نہیں جناب حکیم و ڈاکٹر طار ق محمود تاثیر آج ہم ڈاکٹر صاحب سے جس کورس کے بارے میں پوچھے گے اس کا نام زعفرانی سپرم گرو کورس ہے یہ اُن مردو ں کے لئے تحفہ خاص ہے جو مرد حضرات اولاد کی نعمت سے محر و م ہوتے ہیں یہ کورس مردو ں میں سپرم کی تعد ا د کو بڑھتا ہے اور مادہ تولید کو گاڑھا کرتا ہے جس سے سپرم حمل ٹھہرانے کے قابل بن جا تے ہیں۔ ڈاکٹر صاحب آپ کو بتائیں گے کہ مردا نہ بانجھ ہوتا کیا ہے اس کی وجوہات ، علامات او ر علاج اس کے علاوہ اور بہت سی باتیں جس پر عمل کر کے آپ مر ض سے نجات حاصل کر سکتے ہیں۔ جیسا کہ بہت سے لوگ جانتے ہیں کہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر اپنے بہترین ہربل طریقہ علاج کی وجہ سے پوری دنیا میں شہرت یافتہ ہیں تو آئیے ڈاکٹر صاحب سے ملتے ہیں۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب اسلام و علیکم۔
ڈاکٹر:۔ وعلیکم اسلام۔۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب بانجھ پن کسے کہتے ہیں اور بانجھ پن کی کتنی اقسام ہوتیں ہیں؟


ڈاکٹر:۔آا پ کی چھوٹی سی کمزور ی زندگی کی بڑی محرومی کا سبب بن سکتی ہے۔ ایک سال تک میاں بیوی آپس میں ملاپ کریں اور کوشش کرنے کے باو جود اُن کے درمیان حمل قرار نہ پایا جائے تو اس صورت کو ہم بانجھ پن کہتے ہیں۔ بانجھ پن کی تین اقسام ہوتیں ہیں۔
1۔ منی میں سپر م کی کمی oligospermia:۔ مردانہ بانجھ پن کی ایک وجہ منی میں سپرم کی تعدا د کا کم ہونا ہے۔ سپرم کی مناسب مقدار 200 ملین سے 600 ملین ہے۔ اگر سپرم کی مناسب تعداد 120 ملین سے کم ہو تو سپرم کی کمی کہا جائے گا۔ اس کی کمی کی کئی حیاتیاتی و ماحولیاتی وجو ہات ہو سکتی ہیں۔ مثلاً کثرت مباشرت، منی کا کم ہونا، ان ٹیوبز میں نقص ہونا جو سپرم کو خصیو ں سے عضو تنا سل کی طرف لے جاتی ہیں۔ خصیوں میں اینٹھن وغیرہ اس کے علاوہ ذہنی و جسما نی بے چینی، بے خوابی او ر ہار مونز کے توازن میں بگاڑ ہونے سے بھی سپرم کی پیدائش کم ہوتی ہے۔
2۔ منی میں سپرم کی غیر موجود گی azoospermia:۔ منی میں سپرم کی بالکل غیر موجودگی azoospermia کہلاتی ہے۔ اس بیمار ی میں منی میں سپر م بالکل پیدا ہی نہیں ہو تے ۔ منی میں سپرم بالکل پیدا نہ ہونے کا سب سے بڑا سبب انفیکشن ہے جس میں پیپ آنا، خون کے سر خ ذرات کا آنا یا پھر بیکٹیریا وغیرہ کی موجودگی ہے۔ azoospermia کی دو اقسام ہیں۔
i۔obstrustcive azoospermia:۔ اگر خصیے سائز میں نارمل ہوں اور ہارمون لیول بھی نارمل ہو تو خصیے اور عضو تنا سل کے درمیان نالیاں بند ہونے کو obstrustcive azoospermia کہتے ہیں۔
ii۔nonobostrictive azoospermia:۔ اس بیماری میں منی میں سپرم کا پیدا نہ ہونا خصیوں کی وجہ سے ہوتا ہے۔ جس کی وجہ سے خصیوں میں نقص ہونا اس کے علاوہ خصیوں میں پیدائشی نقص ہونا، ہارمون لیول نارمل نہ ہونا، خصیوں کا انفیکشن او ر تیز بخار بھی اس کی وجہ بنتا ہے۔


3۔necrospermia:۔necrospermia بانجھ پن کی ایسی قسم ہے جس میں منی میں سپرم موجو د تو ہوتے ہیں لیکن وہ زند ہ نہیں ہوتے اور مرد ہ ہونے کے باعث وہ اس قابل نہیں رہتے کہ حمل قرار پانے کا باعث بن سکیں۔ اگر منی میں 40فیصد سپرم مرد ہ حالت میں ہوں تو یہ بیماری necrospermia کہلائے گی۔
اینکر:۔ ڈ اکٹر صاحب مردانہ کمزوری او ر ضعف باہ کسے کہتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔ مردا نہ کمزور ی و ضعف باہ کی اصلیت ، نامردی، ضعف باہ ان الفاظ میں وسیع معنی موجود ہیں یعنی معمولی کمزور ی سے لے کر نامردی تک کے تمام درجات اس میں شامل ہیں مگر اس میں تین صورتیں اہمیت کی حامل ہیں۔
1۔ایسی کمزوری کہ مباشرت و مواصلت اور جماع کی قابلیت ختم ہو جا ئے ۔
2۔مباشرت کا شوق یا خواہش کا ختم ہونا یا کم ہو جانا۔
3۔قوت تولید کا نقص یعنی ا ولاد پیدا کر نے کے قابل نہ ہونا اس میں مباشرت کی قابلیت تو موجود ہوتی ہے مگر اولاد پیدا کرنے کی قو ت نہیں ہو تی ا ن تینو ں صورتوں کو بھی ضعف باہ میں شمار کیا جاتا ہے۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب جو مرد حضرا ت اس بانجھ پن کے مرض میں مبتلا ہوتے ہیں اُن کے اند ر کو ن سے اسباب پائے جاتے ہیں جس سے پتہ چلتا ہے کہ مریض اس مر ض میں مبتلا ہے؟
ڈاکٹر:۔ یہ مرض مختلف اسباب کی وجہ سے پید ا ہوتے ہیں۔ کثر ت مباشرت، جلق، اغلام، کثرت احتلام ، کثرت جریان، منی، عضو تناسل کے ذاتی نقص ، خصیہ کا ورم، ماد ہ منویہ کی کمی ، شدید جسمانی مشقت ، موٹاپا، نشہ آو ر چیزوں کا کثرت استعمال، ذہنی و نفسیاتی اثرات، خصیوں کے سائز میں فرق آنا ، مادہ منویہ کا پتلا ہونا، شوق مباشرت کا ختم ہو جانا ، وغیرہ اس کے اسباب میں شامل ہیں۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب جو مریض اس مرض میں مبتلا ہوتے ہیں اُن مریضوں میں کون کون سی علامات پائی جاتی ہیں؟
ڈاکٹر:۔ عضو مخصوص کا ڈھیلا ہونا ، جس سے قوت مباشر ت ناقص یا بالکل ختم ہو جاتی ہے کبھی معمولی سا تنا ؤ آتا ہے تو کبھی تناؤ بالکل نہیں آتا کبھی مباشر ت کی طرف رغبت ہی نہیں ہوتی مریض سست کمزور پست ہمت ، ڈر بھوک اور اس میں چڑ چڑا پن آ جاتا ہے ، مردانہ بانجھ پن جنسی قوت کی خرابی کا نام ہے اور جنسی قوت تین قوتوں کا مجموعہ ہے ان تین قوتوں میں سے جب کسی قوت یا فعل میں خرابی ہو گی تو بانجھ پن پیدا ہو سکتا ہے ۔ خواہش و جذبے کا نہ ہونا۔ خواہش ، جذبے او ر کشش کا تعلق اعصاب سے ہے۔ اس جذبے میں کمی بیشی کے لئے اعصاب کو دیکھا جائے گا۔ نطفے کی منتقلی کے لئے عضو مخصوص کی کار کرد گی کو پیش نظر رکھا جائے گا۔ کیونکہ نطفہ اور خواہش دونوں موجو د ہو ں لیکن متعلقہ مقام تک پہنچانے کے لئے عضو میں ہی جان نہ ہو تو ا یسے بانجھ پن کی نوعیت او ل مختلف ہو گی۔ نطفہ خصیوں کے تحت تیار ہوتا ہے۔ اس میں نقص واقع ہو تو غدی بانجھ پن تصور ہو گا۔ یہ تینوں مفرد اعضاء اپنی حالت سے ایک دوسر ے کو متاثر (طاقتور، کمزور او ر سست) کرتے ہیں۔ جب ان کے افعال میں توا زن ہو گا جنسی قوت بھی درست ہو گی۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب دوران علاج کون کو ن سے چیزوں سے مریض کو پرہیز کرنا چاہیے اور کون سی اشیاء کا استعمال کر سکتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔ پرہیز علاج سے بہتر ہے
پرہیز:۔ آلو مٹر، گوبھی، بیگن، پالک، چاول، بڑا گوشت ، پکوڑے سموسے، اچار چٹنی تمام گرم بادی چٹ پٹی تیز مصالحہ جات تمام کو لڈ ڈ رنکس ٹھنڈی اشیاء شیو ر مرغی۔
استعمال کرنے والی اشیاء:۔ کدو، ٹنڈے، توری، مولی، گاجر، شلجم، چھوٹا گوشت، دودھ ، دہی، تمام ڈرائی فروٹ، شہد ، کھجور، کالے اور سفید چنے د ال ماش، مچھلی دیسی لیموں فرائش ، فروٹ، سیب، کینو، مالٹا، آم اور کیلا وغیرہ استعمال کر سکتے ہیں۔
اینکر:۔ داکٹر صاحب جیسا کہ آپ بے اولادی کے مشہور و معروف روحانی معالج کا درجہ رکھتے ہیں اور اپنے قدرتی طریقہ علاج کی وجہ سے پوری دنیا میں مشہور و معروف شخصیت ہیں آج آپ ہمارے ناظرین کو بتائیں کہ کیا طب میں مردانہ بانجھ کا کوئی علاج موجود ہے؟ ا ور اگر علاج ہے تو وہ ہمارے ناظرین کو بتائیں تا کہ مردا نہ بانجھ پن کے شکار مرد و خواتین اس سے نجات پا کر اپنی دیرینہ خواہش یعنی اولاد کی نعمت سے مالا ما ل ہو سکیں۔


ڈاکٹر:۔ سب سے پہلے تو میں ناظرین کو یہ بتانا چاہتا ہوں کہ مردانہ بانجھ پن یعنی مردوں میں اولاد کا نہ ہونا ایک قابل علاج مرض ہے ا ور مردانہ بانجھ پن کے لئے طبی علاج یعنی ہربل طریقہ علاج ہی سب سے بہتر اور پُر اثر علاج ہے جو کہ بانجھ پن کا 100 فیصد خاتمہ کر کے اولاد کی نعمت سے محروم جوڑوں کو قابل اولاد بناتا ہے اور دوسری بات یہ کہ قدرتی (ہربل)ّ طریقہ علاج ہی ایسا علاج ہے جس کے رزلٹس مستقل ہوتے ہیں او ر اس کا کسی بھی قسم کا کوئی سائیڈ ایفیکیٹ بھی نہیں ہوتا۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب آپ کے پاس مردانہ بانجھ پن کا جو علاج ہے اس کے بارے میں ذرا تفصیل سے ہمارے ناظرین کو بتائیں تا کہ ایسے مرد حضرات جو کہ اولاد کی نعمت سے محروم ہیں اور طرح طرح کے علاج کروا کر بھی اولاد کی نعمت سے محرو م ہیں اور اب مایوس ہو چکے ہیں۔ و ہ تاثیر دواخانے پر تشریف لائیں اور آپ سے علاج کرو ا کر اپنی دیرا ینہ خواہش یعنی اولاد کی نعمت سے مالا مال ہوں سکے؟
ڈاکٹر: تاثیر دواخانے پر مردانہ بانجھ پن کے لئے مختلف قسم کے علاج موجود ہیں جو کہ ہمارے ادارے کے مستند ا و ر تجربہ کار ڈاکٹرز حکماء اور سائنسدانوں نے قدیم و جدید تحقیق کے نچوڑ سے اور بے اولادی کے اصل اسباب کو مدنظر ر کھ کر مختلف قسم کی قدرتی جڑی بوٹیوں او ر قیمتی مرکبات پر ریسرچ کر کے بے ا ولاد مرد حضرات کے لئے بانجھ پن کی تینوں اقسام یعنی۔۔azoospermia,oligospermia,necrospermiaکا مکمل قدرتی علاج دریافت کیا ہے ۔ بہت سے دوسرے حکیماء یا ڈاکٹرز بانجھ کے مریض میں مرض کی مکمل تشخص کیے بغیر اور بنا رپورٹس چیک کئے نسخہ مایوسی کی صورت میں ہوتا ہے ۔ الحمد ا للہ ہم مریض کا مکمل چیک اپ کرتے ہیں او ر مرض کی رپور ٹس دیکھ کر مرض کی اصل وجوہات معلوم کرتے ہیں جس کے بعد ہی بہترین نسخہ تجویز کیا جاتا ہے۔ اللہ کا شکر ہے کہ آج بے اولادی کے لئے بہترین مر کز سمجھا جانے والا ادارہ تاثیر دواخانہ پاکستان کا وہ واحدادارہ ہے جہاں سے سینکڑوں جوڑے اپنی مراد پوری کر چکے ہیں اور ناظرین اگر آپ ہماری ویب سائیٹ وزٹ کریں تو آپ کو یہاں پر مریضوں کا مکمل ڈیٹا ملے گا جس میں علاج کے لئے آنے والے مریضوں کے علاج سے پہلے سے لے کر علاج کے بعد تک کی مکمل رپورٹس موجود ہیں جن سے آپ کو ہمارے علاج کا اندازہ ہو گا کہ بے اولادی کے لئے ہمارا علاج ہی مریض کا پہلا انتخاب ہوتا ہے۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب جو مرد اس مرض میں مبتلا ہے اُن مردوں کے لئے آپ کے پاس کوئی تحفہ خاص موجود ہے جس کو استعمال کر کے وہ اس مرض سے بآسانی باہر نکل سکے؟
ڈاکٹر:۔ہمارے ادارے تاثیر دواخانہ کے مایہ ناز ڈاکٹرز، حکماء اور سائنسدانوں نے میری سر پرستی میں برس ہا برس کی تحقیقات اور بانجھ پن کے اصل اسباب اور وجو ہات کو مد نظر رکھ کر اپنی ریسرچ سے زعفرانی سپرم گرو کورس کو متعارف کراویاہے جو ہر طرح کے کیمیائی اجزاء سے پاک مکمل طور پر قدرتی دوا ہے اس کا کوئی بھی سائیڈ ایفیکٹ نہیں ہے یہ خالص جڑی بوٹیوں سے تیار شدہ ہے اور100فیصد نتائج کا حامل ہے ۔ تاثیر لیبارٹریز نے برسوں کی تحقیق کے بعد سپرم کی افرائش کے لئے ایسا کورس تیار کیا ہے جس کا نام زعفرانی سپرم گرو کورس ہے ۔ یہ کورس شعبہ ریسرچ نے دیسی جڑی بوٹیوں کی آمیزش کے ساتھ طب اسلامی کے اصولوں کے عین مطابق سائنٹیفک طریقوں پر تاثیر لیبارٹریز میں جدید آٹو میٹک مشینری کی مدد سے تیار کیا ہے۔ جس کے استعمال سے ہر طرح کا انفکیشن ختم ہو جاتا ہے اور منی میں جراثیم نسل پیدا ہونے لگتے ہیں ۔ جس سے,oligospermia, necrospermia azoospermiaجیسی بیماری سے مکمل طور پر نجات مل جاتی ہے۔ یہ مردوں کے جرثومہ حیات میں ہونے والی تبدیلیوں کے افرائشی ہارمون HGHکے سپرم کی سطح میں اضافہ کرتا ہے۔ بے اولاد افراد کے سپرم کم ہوں تو ان کے مادہ تولید میں سپرمز کو نارمل حالت میں لاتا ہے ۔مادہ تولید کی افزائش کو بڑھا کر سپرم کو اولاد کے قابل بناتا ہے۔ سپرم کی پیدائشی کمزوری اور کمی ایسی محرومی ہے جو ایک صحت مند آدمی کو بھی کھوکھلابنا دیتی ہے ان دونوں صورتوں میں یعنی کرم منی کی کمزوری اور اس کے قدرتی تناسب کو درست کر کے اس کے قوام کو ٹھیک کرتا ہے اس میں شامل نہایت ہی قیمتی اورنایاب جڑی بوٹیاں نہ صرف مادہ تولید کو پیدا کرنے اور اسے گاڑھا کرنے میں موثر ہے بلکہ اس میں موجود سپرم کی کمی کو بھی دور کرتا ہے یہ کورس مادہ تولیداور سپرم سمیت تما م مردانہ امراض جو بانجھ پن کا سبب بنتے ہیں جیسے مادہ تولید میں جراثیم یعنی سپرم کا نہ ہونا، خصیوں کا نا کارہ ہونا، خصیوں اور عضوتناسل کے درمیان نالیوں کا بند ہونا، خصیوں میں انفیکشن ہونا وغیرہ کو نہ صرف ختم کرتا ہے بلکہ ان کو دوبارہ پیدا بھی نہیں ہونے دیتا۔زعفرانی سپرم گرو کورس 40یوم کے دورانیہ پر مشتمل ہے زعفرانی سپرم گرو کورس کی مکمل قیمت پاکستانی 18000/-روپے ہے کیونکہ اس زعفرانی سپرم گرو کورس کا شمار ہمارے پست در پست صدی نسخہ جات میں ہوتا ہے اس لئے یہ کورس صرف ہمارے ادارے تاثیر دواخانے پر ہی د ستیا ب ہے مرد حضرات کو میں بتاتا چلو کہ وہ پاکستان میں ہے یا دنیا کے کسی بھی ملک میں ہے آپ بذریعہ آڈر زعفرانی سپرم گرو کورس مانگووا سکتے ہیں۔پاکستان میں ہم بذریعہ V.Pپررسل بھیجتے ہیں اس کے علاوہ آپ خود ہمارے کلینک پر تشریف لا کر خود طلب کر سکتے ہیں۔پاکستان سے باہر دنیا کہ ہر ملک میں ہم بذریعہ ائیر شیب بھیجتے ہیں جہاں ایک خاص بات میں بتاتا چلو ہم پوری دنیا میں ہوم ڈیلوری سروس فراہم کرتے ہیں مطلوبہ کورس آپ کے گھر تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ نوٹ( کورس کے بہترین نتائج کے لئے 4سے6ماہ مسلسل استعمال کریں)تاثیر دواخانے پر ان تینوں حالتوں کا مکمل اور قدرتی طریقہ علاج ہے۔اگر آپ کسی بھی مرض میں مبتلا ہے بانجھ پن کی کسی بھی قسم میں مبتلا ہےazoospermia,oligospermia,necrospermiaتو آج ہی بے اولادی کے نامور اور مشہور روحانی معالج حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر سے رابطہ کریں جہاں پر سینکڑوں بے اولاد جوڑے اپنے آنگین میں خوشیاں بکھیر چکے ہے ۔
ناظرین اگر آپ بھی زعفرانی سپرم گرو کورس خریدنا چاہتے ہیں تو دیر مت کیجئے بلکہ ابھی کال کر کے اپنا آرڈر بک کروائیں۔ ہمارے ہیلپ لائن نمبرز یہ
ڈاکٹر صاحب سے براہ راست مشورے کے لئے ان نمبر ز پر رابطہ:+92334-9552889
+92321-9552889
+92300-9552889
آپ کی راہنمائی کے لئے میل اور فی میل میڈیکل آفیسرز ہمہ وقت موجود ہیں جن سے آپ اپنی بیماری اور ہر قسم کے مرض کے بارے میں راہنمائی حاصل کر سکتے ہیں جو آپ کو ہر قسم کی راہنمائی فراہم کرئے گے( کلینک ٹائم صبح 9بجے سے لے رات8بجے تک)
میڈیکل آفیسر نمبر1: +92333-5501390
میڈیکل آفیسر نمبر2:۔ +92323-5501390
میڈیکل آفیسرنمبر3: +92336-5777696
میڈیکل آفیسرنمبر4: +92336-5777697
فی میل (لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر1: +92331-5607654
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر2: +92332-5607654
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر3: +92332-5530536
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر4: +92315-5530536
کلینک (Reception landline) نمبرز:۔ +9251-5777696,+9251-5777697,+92515530536,+9251-5773239
نوٹ:۔ آپ اپنی بیماری کے متعلق مکمل معلومات کے ساتھ میل کریں ۔ آپ ہمارے ای میل taseerlabs@gmail.com،taseerdawakhana@gmail.comپر بھی آپ اپناآرڈر بک کروا سکتے ہیں۔
ہمارا ایڈریس ہے: تاثیر دواخانہ i-111:اقبال روڈ، نزد کمیٹی چوک، چٹیاں ہٹیاں، تاثیر چوک راولپنڈی۔مزید معلومات کے لئے وزٹکیجئے ہماری ویب سائیٹ www.taseerlabs.com,dawakhanataseer.com۔
اینکر:۔بہت بہت شکریہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر صاحب آپ نے ہمارے ناظرین کو زعفرانی سپرم گرو کورس کے بارے میں بہترین راہنمائی کی امید ہے کہ ناظرین اس سے بہت زیادہ فائدہ اُٹھائیں گے اور آپ کو اپنی دعاؤں میں یاد رکھیں گے۔ ناظرین۔۔۔۔ یہ تھے بے اولادی کے مشہور روحانی معالج حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر جو کہ ہر قسم کے مردانہ و زنانہ امراض کے ماہر ہیں۔ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود
تاثیر نے آج مردانہ بانجھ پن سے متعلق ہم سب کی بہترین راہنمائی کی۔ امید ہے آپ ضرور ڈاکٹر صاحب کی بتائی ہوئی باتوں پر عمل کر کے مردانہ بانجھ پن سے چھٹکارا حاصل کر سکیں گے اور ایسے افراد تک ڈاکٹر صاحب کی بتائی ہوئی باتیں پہنچائیں گے جو کہ اولاد کی نعمت سے محروم ہیں تا کہ وہ جلد از جلد حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر سے اپنا علاج کروا کر اپنے آنگین میں خوشیاں بکھیر سکیں۔۔۔۔ اپنا خیال رکھئے گا۔۔۔ اللہ حافظ۔

مرواریدی سپرم گرو کورس

اینکر:۔اسلام و علیکم۔۔ ناظرین ۔۔امید ہے آپ سب خیریت سے ہوں گے۔ ناظرین آج ہم نے اپنے پروگرام میں جس شخصیت کو دعوت دی ہے وہ ملک پاکستان کے نامور اور بے اولادی کے مشہور روحانی معالج جو کسی تعارف کے کے محتاج نہیں جناب حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر آج ہم ڈاکٹر صاحب سے جس کورس کے بارے میں پوچھے گے وہ زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس ہے جس کو استعمال کر کے مرد بانجھ پن سے نجات حاصل کر سکتے ہیں وہ بھی کسی سائیڈ ایفیکٹ کے بغیر اس کے علاوہ ڈاکٹر صاحب آپ کو بتائیں گے کہ مردانہ بانجھ کیا ہے؟اس کی وجوہات ، علامات اور علاج اس کے علاوہ اور بہت سی باتیں جن سے مردانہ بانجھ پن سے بچا جا سکتا ہے۔ جیسا کہ بہت سے لوگ جانتے ہیں کہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر اپنے بہترین ہربل طریقہ علاج کی وجہ سے پوری دنیا میں شہرت
یافتہ ہیں۔ تو آئیے۔ ڈاکٹر صاحب سے ملتے ہیں۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب اسلام و علیکم۔۔
ڈاکٹر:۔وعلیکم اسلام
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب مردانہ بانجھ پن کسے کہتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت میں کمی یا بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت کا نہ ہونا، بانجھ پن کی تعریف اس طرح کی جاتی ہے کہ1سال کے عرصے تک نارمل مباشرت ہوتے رہنے کے باوجود اور مائع حمل ادویات استعمال کئے بغیر حمل قرار نہ پانا ہے۔ بانجھ پن کا شکار مر د بھی ہو سکتا ہے اور عورت بھی اس مرض میں مبتلا ہو سکتی ہے ۔بانجھ پن ابتدائی اور ثانوی دو طرح کا ہوتا ہے ۔primary infertilityسے مراد وہ مریض ہیں جن میں پہلے کبھی حمل نہیں ہوا اور ثانوی بانجھ پن secondary infertilityسے مراد وہ مریض جن کے ہاں پہلے حمل واقع ہو چکا ہو جبکہ اس ایک اور اصطلاح سٹرلٹی سے مراد بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت کا مرد یا عورت میں مکمل طور پر ختم ہو جانا ہے ،ماضی میں بانجھ پن کے شکار جوڑوں میں بچہ پیدا ہونے کی صلاحیت کم ہوتی تھی مگر آج جدید دور میں مناسب تشخص اور علاج سے85فیصد جوڑے بچہ پیدا ہونے کی اُمید کر سکتے ہیں ۔بانجھ پن میں مبتلا جوڑوں کو بہت زیادہ پریشانی اور دباؤ کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ عورت کے لئے تو بانجھ گالی بن جاتی ہے ۔ایسے جوڑے جن کے ہاں بچہ نہ ہوا ہو سارے کا سارا قصورعورت کا ہی بن جاتا ہے اور بچہ پیدا نہ کرنے پر طعنے ملتے رہتے ہیں اور لعنت ملامت ہوتی رہتی ہے ۔حالانکہ بانجھ پن کا شکار مرد بھی ہو سکتے ہیں ۔ بانجھ پن کی40فیصد وجوہات مردوں میں پائی جاتی ہیں اور آج کل بہت جلد اس کی تشخص ہو سکتی ہے بانجھ پن کا شکار کون ہے مرد یا عورت ۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب حمل کے لئے کیا شرائط ہوتیں ہیں جس پر عمل کر کے آسانی سے حمل ٹھہر جاتا ہے؟
ڈاکٹر:۔مرد اور عورت دونوں کا تندرست ہونا بہت ضروری ہے۔ مرد کو سرعت انزال اور ضعف باہ کا مریض نہیں ہونا چاہیے ۔ مرد کی طرف سے اس کے مادہ منویہ نارمل اور مناسب جرثومہ منویہ پیدا ہونے کی ضرورت ہوتی ہے سپرم کی صورت حال کچھ اس طرح سے ہونی چاہیے کہ کم از کم 72گھنٹے کے پرہیز کے بعد مرد میں (حاصل ہونے والے )مادہ منویہ کا تجزیہ کرنے یہ مادہ منویہ کی مقدار1.5ملی لیٹر سے5ملی لیٹر تک پیدا ہوتی ہے۔ ایک ملی لیٹر مادہ منویہ میں20ملین یا اس سے زائد سپرم50سے60فیصد تک حرکت کرنے والے(motile)اور60فیصد سے زائد نارمل شکل و صورت والے سپرم ہو نے چائیں مرد کو سپرم کی تعداد میں کمی oligospermiaیعنی سپرم کی تعداد کا ایک ملی لیٹر میں 20ملین سے کم ہونا یا مادہ منویہ میں سپرم کا موجود نہ ہوناazoospermiaکا مریض نہیں ہونا چاہیے ۔

اینکر:۔مردوں میں بانجھ پن کے اسباب کون کون سے ہوتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔مردوں میں تولید مادہ منویہ کے مسائل40فیصد سے زائد بانجھ پن کی وجوہات کا سبب بنتے ہیں۔سپرمیٹوجینیسز سپرم بننے یا سپرم کی نشوونما کو کہتے ہیں ۔ عورتوں کے بیضہovumسے بالکل مختلف جو کہ ہر ماہ عورتوں میں وقفے سے اووریز سے خارج ہوتا رہتا ہے ۔سپرم خصیوں کی بشرہ جرثومہ سے لگاتار تیار ہوتے رہتے ہیں جرمینل ایبی تھیلیل سے سپرم اغدید یوس میں خارج کر دئیے جاتے ہیں جہاں پرانزال سے پہلے سپرم میں میجوریشن ہوتی ہے۔ سپرم کی نسل تیار ہونے میں تقریباً 73دن لگتے ہیں اس لئے سپرم کی ابنارمل تعداد واقعات کا ریفیکشن ہوتی ہے۔ جو سپرم اکٹھا کرنے سے پہلے 73دن میں واقع ہوتے ہوں سپرم کی پیداوار میں تبدیلی کا مشاہدہ کر نے کے لئے کم از کم 73دن کی ضرورت ہوتی ہے۔ سپرم کی پیداوار thermoragulatedہے یعنی حرارت سے کنٹرول ہوتی ہے ۔ خصیوں کے اندر حرارت خصیوں کی تھیلی کے پھیلنے اور سکڑنے سے کنٹرول ہوتی ہے ۔ سپرم کی پیدائش تقریباً 10Fپر ہوتی ہے خصیوں کے لئے بیرونی حرارتی صدمہ سپرم کی پیدائش میں کمی کا سبب بن سکتا ہے مثلاً خصیوں کو پہنچنے والے صدمے ،انفکشن ورم خصیہ ، کن پیٹرے یا پیدائشی طور پر خصیوں کا پیٹ میں رہ جانا، ہارمون کے توازن میں خرابی ،تیز بخار ، کوکین ، بھنگ، الکوحل کا استعمال وغیرہ ،وزن بہت زیادہ ہونا یا کم ہونا،مردوں میں منی میں گرمی و تیزی کے نتیجے میں منی کی رنگت زرد مقدار کم اور بو بہت بری ہوتی ہے اس طرح اگر منی میں برودت کی زیادتی ہے تو منی کا قوام پتلا اور اس کی مقدار بہت زیادہ ہو گئی ۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب مردانہ بانجھ پن کے لاحق ہونے میں کون کون سے عوامل شامل ہوتے ہیں؟
ڈاکٹر:۔ناظرین مردانہ بانجھ پن کے لاحق میں بہت سے عوامل ہوتے ہیں جس کی وجہ سے یہ ہولناک مرض پیدا ہوتا ہے۔
اعصابی تحریک اور جنسی قوت:۔ دماغ و اعصاب احساسات کا مرکز ہیں جو اندرونی جسم اور بیرونی ماحول میں ہونے والی تبدیلیوں اور محرکات کا احساس کرنے اور حالات کے مطابق عضلات کو حکم رسائی کر کے پسندیدگی اور ناپسندیدگی کو حاصل کرتے ہیں۔ہضم چہارم کے فضلے کی جب خون میں بہتات ہوتی ہے تو خصیے خون سے اپنی ساخت کی منی علیحدہ و جمع کر دیتے ہیں ۔ اس دباؤ کو احساسات ایک خاص لذت کی صورت میں محسوس کرتے ہیں۔ لذت کی انتہائی صورت اخراج کے وقت حاصل ہوتی ہے۔ چنانچہ اس دباؤ اور حصول سے نجات کے لئے جنسی اعضاء اعصاب کو حکم دیتے ہیں۔ حکم کا طریقہ یہ ہے کہ اس طرف دوران خون کا رجوع ہو کر عضو مخصوص جس کا زیادہ تر حصہ عضلاتی انسحہ کا بنا ہوا ہے وہ تناؤ میں آ جاتا ہے۔ پھر اس کی حرکات اور محرکات کے نتیجے میں پیدا ہونے والی حرارت کے اثر سے خصیے اور منی خارج ہوتی ہے اخراج منی اور جماع کا یہ فطری طریقہ ہے اور یہ اسی وقت ممکن ہے جب تینوں مفرد اعضاء توازن و صحت کی حالت میں ہوں۔
عضلاتی تحریک اور جنسی بیماری:۔جسم انسانی میں ارادی اور غیر ارادی حرکات کے ذمہ دار عضلات فطری صورت میں مضر اثرات سے بچنے کے لئے اور مرطوبات اور مطلوبات کے حصول کے لئے اعصاب ایک ترتیب و سلیقے سے کام کرتے ہیں لیکن انتہائی موافق حالات یا تیزی میں آ جاتے ہیں۔اسے ہم عضلاتی تحریک کہتے ہیں۔ ہر تحریک میں درجہ بہ درجہ جسم کے اندر تبدیلیوں میں اضافہ ہوتا رہتا ہے ۔غیر طبی تحریک ہو جائے تو ایک حد تک دماغ کے کنٹرول سے نکل کر جسم اور جنسی قوت پر اثرات مرتب کرتے ہیں۔دماغ کی صالح رطوبات بوجہ تحلیل فنا ہوتی رہتی ہیں۔ غدود خصیے تسکین کی وجہ سے اپنا کام روک دیتے ہیں یا کم کر دیتے ہیں۔
غدی بانجھ پن اور جنسی علامات:۔افزائش نسل کے لئے نطفہsemenخصیوںtesticlesمیں تیار ہوتا ہے۔ خصیوں مین غدود چھوٹے چھوٹے اجزاء میں تقسیم ہو جاتے ہیں۔ ہر نطفے میں تین سو کے قریب لابیول پائے جاتے ہیں۔انکے اندر سے باریک خمدار نالیاں بن کر نکلتے ہیں۔ خمدار نالیاں در اصل منی کی نالیاں ہیں ان کے منی خون سے علیحدہ ہوتی ہے۔خم اس لئے ہے کہ فاصلہ زیادہ ہو جائے اور منی ٹھر کر مطلوبہ حرارت جذب کر کے پختہ ہو جائے۔ منی دو تھیلیوں جو تقریباً5سینٹی میٹر لمبی ہوتی ہیں۔ مثانے کے پیچھے پائی جاتی ہیں اور اس میں جمع ہوتی رہتی ہے۔ ٹیوبیولز میں پختگی کے بعد سپرم کی پیدائش ہوتی ہے جو منی کے ساتھ خارج ہوتے ہیں۔
سیمن semenکے امراض:۔سمین کے امراض جاننے سے پہلے مختصر طور پر جاننا ضروری ہے کہ یہ کہاں پیدا ہوتے ہیں یہ کتنی دیر میں جوان ہوتے ہیں یہ محرک اور زندہ کس رطوبت میں رہتے ہیں ان کی اقسام کتنی ہیں ان کا مزاج کیا ہے ان کی مقدار کتنی ہے؟ اور یہ کتنے فیصد ہوں تو اپنا فعل سر انجام دیتے ہیں کرم منی بلوغت میںF.S.Hاور ٹیسٹو سیڑن کے زیر اثر سمینی
فیرس ٹیوبز کے خلیوں میں پیدا ہونا شروع ہو جاتے ہیں یعنی کرم منی sperm،خصیتینtesticlesمیں تیار ہوتے ہیں۔جبکہ باقی رطوبات سمینل وہیکل اور پیراسٹیٹ میں بنتی ہیں اس لیئے یمنل وہیکل سے خارج ہونے والی لیسدار رطوبت کے اندر سپرم متحرک زندہ اور صحت مند رہتے ہیں۔ اگر منی خارج نہ ہو تو سپرم کی شکل و حالت بن جاتی ہے سمین میں خرابی ہونا پیچیدہ و خطرناک بیماری یا زندگی کے خطرے کی پہلی علامت ہو سکتی ہے۔ جیسےtestes cancerخصیوں کا کینسرکہتے ہیں۔
اینکر:۔ ڈاکٹر صاحب دوران علاج مریض کو کن کن چیزوں سے پرہیز کرنا چاہیے اور کون سی ایسی اشیاء ہے جس کا استعمال کرنا
مریض کے لئے مفید ہے؟
ڈاکٹر:۔پرہیز علاج سے بہتر ہے۔
پرہیز:۔آلو مٹر ، گوبھی ، بیگن، پالک، چاول، بڑا گوشت ، پکوڑے سموسے ، اچار چٹنی تمام گرم بادی چٹ پٹی تیز مصالحے جات تمام کولڈ ڈرنکس ، ٹھنڈی اشیاء، شیور مرغی۔
استعمال کرنے والی اشیاء:۔کدو، ٹنڈے، توری، مولی ، گاجر، شلجم، چھوٹا گوشت، دودھ، دہی تمام ڈرائی فروٹ، شہد کھجور کالے اور سفید چنے ،دال ماش، مچھلی دیسی لیموں فروٹ میں سیب ، کینو، مالٹا، آم اور کیلا وغیرہ استعمال کر سکتے ہیں۔
اینکر:۔ڈاکٹر صاحب جو مرد اس مرض میں مبتلا ہے اُن مردوں کے لئے آپ کے پاس کوئی تحفہ خاص موجود ہے جس کو استعمال کر کے وہ اس مرض سے بآسانی باہر نکل سکے؟
ڈاکٹر:۔ہمارے ادارے تاثیر دواخانہ کے مایہ ناز ڈاکٹرز، حکماء اور سائنسدانوں نے میری سر پرستی میں برس ہا برس کی تحقیقات اور بانجھ پن کے اصل اسباب اور وجو ہات کو مد نظر رکھ کر اپنی ریسرچ سے زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس کو متعارف کراویاہے جو ہر طرح کے کیمیائی اجزاء سے پاک مکمل طور پر قدرتی دوا ہے اس کا کوئی بھی سائیڈ ایفیکٹ نہیں ہے یہ خالص جڑی بوٹیوں سے تیار شدہ ہے اور100فیصد نتائج کا حامل ہے ۔ تاثیر لیبارٹریز نے برسوں کی تحقیق کے بعد سپرم کی افرائش کے لئے ایسا کورس تیار کیا ہے جس کا نام زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس ہے ۔ یہ کورس شعبہ ریسرچ نے دیسی جڑی بوٹیوں کی آمیزش کے ساتھ طب اسلامی کے اصولوں کے عین مطابق سائنٹیفک طریقوں پر تاثیر لیبارٹریز میں جدید آٹو میٹک مشینری کی مدد سے تیار کیا ہے۔ جس کے استعمال سے ہر طرح کا انفکیشن ختم ہو جاتا ہے اور منی میں جراثیم نسل پیدا ہونے لگتے ہیں ۔ جس سے,oligospermia, necrospermia azoospermiaجیسی بیماری سے مکمل طور پر نجات مل جاتی ہے۔ یہ مردوں کے جرثومہ حیات میں ہونے والی تبدیلیوں کے افرائشی ہارمون HGHکے سپرم کی سطح میں اضافہ کرتا ہے۔ بے اولاد افراد کے سپرم ہوں تو ان کے مادہ تولید میں سپرمز کو نارمل حالت میں لاتا ہے ۔مادہ تولید کی افزائش کو بڑھا کر سپرم کو اولاد کے قابل بناتا ہے۔ سپرم کی پیدائشی کمزوری اور کمی ایسی محرومی ہے جو ایک صحت مند آدمی کو بھی کھوکھلابنا دیتی ہے ان دونوں صورتوں میں یعنی کرم منی کی کمزوری اور اس کے قدرتی تناسب کو درست کر کے اس کے قوام کو ٹھیک کرتا ہے اس میں شامل نہایت ہی قیمتی اورنایاب جڑی بوٹیاں نہ صرف مادہ تولید کو پیدا کرنے اور اسے گاڑھا کرنے میں موثر ہے بلکہ اس میں موجود سپرم کی کمی کو بھی دور کرتا ہے یہ کورس مادہ تولیداور سپرم سمیت تما م مردانہ امراض جو بانجھ پن کا سبب بنتے ہیں جیسے مادہ تولید میں جراثیم یعنی سپرم کا نہ ہونا، خصیوں کا نا کارہ ہونا، خصیوں اور عضوتناسل کے درمیان نالیوں کا بند ہونا، خصیوں میں انفیکشن ہونا وغیرہ کو نہ صرف ختم کرتا ہے بلکہ ان کو دوبارہ پیدا بھی نہیں ہونے دیتا۔زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس 40یوم کے دورانیہ پر مشتمل ہے اس زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس کا شمار ہمارے پست در پست صدی نسخہ جات میں ہوتا ہے اس لئے یہ کورس صرف ہمارے ادارے تاثیر دواخانے پر ہی د ستیا ب ہے مرد حضرات کو میں بتاتا چلو کہ وہ پاکستان میں ہے یا دنیا کے کسی بھی ملک میں ہے آپ بذریعہ آڈر زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس مانگووا سکتے ہیں۔پاکستان میں ہم بذریعہ V.Pپررسل بھیجتے ہیں اس کے علاوہ آپ خود ہمارے کلینک پر تشریف لا کر خود طلب کر سکتے ہیں۔پاکستان سے باہر دنیا کہ ہر ملک میں ہم بذریعہ ائیر شیب بھیجتے ہیں جہاں ایک خاص بات میں بتاتا چلو ہم پوری دنیا میں ہوم ڈیلوری سروس فراہم کرتے ہیں مطلوبہ کورس
آپ کے گھر تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ نوٹ( کورس کے بہترین نتائج کے لئے 4سے6ماہ مسلسل استعمال کریں)
ناظرین اگر آپ بھی زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس خریدنا چاہتے ہیں تو دیر مت کیجئے بلکہ ابھی کال کر کے اپنا آرڈر بک کروائیں۔ ہمارے ہیلپ لائن نمبرز یہ
ڈاکٹر صاحب سے براہ راست مشورے کے لئے ان نمبر ز پر رابطہ:+92334-9552889
+92321-9552889
+92300-9552889
آپ کی راہنمائی کے لئے میل اور فی میل میڈیکل آفیسرز ہمہ وقت موجود ہیں جن سے آپ اپنی بیماری اور ہر قسم کے مرض کے بارے میں راہنمائی حاصل کر سکتے ہیں جو آپ کو ہر قسم کی راہنمائی فراہم کرئے گے( کلینک ٹائم صبح 9بجے سے لے رات8بجے تک)
میڈیکل آفیسر نمبر1: +92333-5501390
میڈیکل آفیسر نمبر2:۔ +92323-5501390
میڈیکل آفیسرنمبر3: +92336-5777696
میڈیکل آفیسرنمبر4: +92336-5777697
فی میل (لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر1: +92331-5607654
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر2: +92332-5607654
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر3: +92332-5530536
فی میل(لیڈی میڈیکل آفیسر)نمبر4: +92315-5530536
کلینک (Reception landline) نمبرز:۔ +9251-5777696,+9251-5777697,+92515530536,+9251-5773239
نوٹ:۔ آپ اپنی بیماری کے متعلق مکمل معلومات کے ساتھ میل کریں ۔ آپ ہمارے ای میل taseerlabs@gmail.com،taseerdawakhana@gmail.comپر بھی آپ اپناآرڈر بک کروا سکتے ہیں۔
ہمارا ایڈریس ہے: تاثیر دواخانہ i-111:اقبال روڈ، نزد کمیٹی چوک، چٹیاں ہٹیاں، تاثیر چوک راولپنڈی۔مزید معلومات کے لئے وزٹکیجئے ہماری ویب سائیٹ www.taseerlabs.com,dawakhanataseer.com۔
اینکر:۔بہت بہت شکریہ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر صاحب آپ نے ہمارے ناظرین کو زعفرانی مرواریدی سپرم گرو کورس کے بارے میں بہترین راہنمائی کی امید ہے کہ ناظرین اس سے بہت زیادہ فائدہ اُٹھائیں گے اور آپ کو اپنی دعاؤں میں یاد رکھیں گے۔ ناظرین۔۔۔۔ یہ تھے بے اولادی کے مشہور روحانی معالج حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر جو کہ ہر قسم کے مردانہ و زنانہ امراض کے ماہر ہیں۔ حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر نے آج مردانہ بانجھ پن سے متعلق ہم سب کی بہترین راہنمائی کی۔ امید ہے آپ ضرور ڈاکٹر صاحب کی بتائی ہوئی باتوں پر عمل کر کے مردانہ بانجھ پن سے چھٹکارا حاصل کر سکیں گے اور ایسے افراد تک ڈاکٹر صاحب کی بتائی ہوئی باتیں پہنچائیں گے جو کہ اولاد کی نعمت سے محروم ہیں تا کہ وہ جلد از جلد حکیم و ڈاکٹر طارق محمود تاثیر سے اپنا علاج کروا کر اپنے آنگین میں خوشیاں بکھیر سکیں۔۔۔۔ اپنا خیال رکھئے گا۔۔۔ اللہ حافظ۔۔